ریل  کی سیٹی میں کیسی درد کی تمہید تھی

تم  کو   رخصت   کر  کے   لوٹا   تو   یاد   آیا

Advertisements